Breaking News

مسلم لیگ ن کی صدارت-کلثوم نواز اور مریم نواز کے حوالے سے اہم وضاحت سامنے آگئی



Shahbaz Sharif Kalsoom Nawaz Mariam Nawaz Sharif - شہباز شریف ، کلثوم نواز شریف ، مریم نواز شریف
اسلام آباد(عاطف فاروق ڈاٹ کام)  سپریم کورٹ کی جانب سے نواز شریف کو پارٹی صدارت سے نااہل قرار دیئے جانے کے بعد مسلم لیگ (ن) نے شہباز شریف کو پارٹی صدر بنانے کا فیصلہ کیا ہےاور مسلم لیگ ن کی پارٹی صدارت کے حوالے سے یہ وضاحت بھی منظر عام پر آگئی ہے کہ پاکستان مسلم لیگ ن کی
صدارت کے لئے مریم نواز اور کلثوم نواز کے نام کسی بھی سطح پر زیر غور نہیں آئے ۔ تفصیل کے مطابق ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف نے شہبازشریف کی بطور پارٹی صدر نامزدگی پر مشاورت مکمل کر لی ہے جب کہ مسلم لیگ (ن) کے اجلاس میں کلثوم نواز اور مریم نواز کا نام بطور پارٹی صدر کسی بھی سطح پر زیر غور نہیں آیا۔ذرائع کے مطابق شہباز شریف کو صدر منتخب کرانے کے لیے رسمی منظوری مسلم لیگ (ن) کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے اجلاس میں لی جائے گی۔مسلم لیگ (ن) کے ذرائع کا یہ بھی بتانا ہے کہ عدالتی حکم پر عملدرآمد کا قانونی تقاضہ ہر صورت پورا کیا جائے گا لیکن مسلم لیگ (ن) کی جانب سے سپریم کورٹ کےفیصلے کے خلاف نطرثانی اپیل دائرنہ کرنے کا امکان ہے کیونکہ ماضی میں نظرثانی اپیل پر مسلم لیگ (ن )کو کوئی ریلیف نہیں ملا۔سپریم کورٹ نے گزشتہ روز انتخابی اصلاحات کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے میاں نوازشریف کو پارٹی صدارت کے لیے بھی نااہل قرار دیا جب کہ عدالتی فیصلوں کو نوازشریف نے غصے اور بغض کا نتیجہ قرار دیا ہے۔جیونیوز کے مطابق میاں نوازشریف کی زیر صدارت پنجاب ہاؤس اسلام آباد میں پارٹی رہنماؤں کا اہم اجلاس ہوا جس میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کے علاوہ مریم نواز، پرویز رشید، مریم اورنگزیب، عابد شیر علی، دانیال عزیز، مصدق ملک، تہمینہ دولتانہ اور آصف کرمانی سمیت دیگر شریک ہوئے جب کہ کارکنان کی بڑی تعداد بھی پنجاب ہاؤس میں موجود تھی۔ذرائع کے مطابق اجلاس میں مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں اور کارکنان نے میاں نوازشریف کے حق میں نعرے بازی کی اور ’وزیراعظم نوازشریف‘ کے نعرے لگائے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اجلاس میں انتخابی اصلاحات کیس کے عدالتی فیصلے، پارٹی صدارت، سینیٹ الیکشن اور آئندہ کی حکمت عملی پر غور کیا گیا۔مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں نے میاں نوازشریف پر اپنے بھرپور اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے ان کے ساتھ کھڑا رہنے کی یقین دہانی کرائی ہے۔ذرائع نے بتایا کہ (ن) لیگ کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہےکہ پارلیمنٹ کی بالا دستی سے متعلق قانون سازی پر بھی مشاورت کی جائے گی اور قانون سازی کے لیے پیپلز پارٹی کی حمایت حاصل کی جائے گی، پیپلزپارٹی سے رابطے کے لیے اتحادی جماعتوں کی خدمات لینے کا فیصلہ بھی کیا گیا ہے۔ذرائع کے مطابق اجلاس میں الیکشن کمیشن کو اس بات سے آگاہ کرنے پر اتفاق کیا گیا ہے کہ سینیٹ امیدواروں کاانتخاب پارلیمانی بورڈ کرتا ہے۔